انار کھانے کی خواہش

حضرت ابراہیم خواص رحمۃ اللہ علیہ نے فرمایا ہے کہ میں کوہ میں تھا وہاں پر میں نے انار دیکھے اور دل میں انار کھانے کی خواہش ہوئی میں نے ایک پھانگ اٹھا کر اس کو چکھا وہ کھٹا نکلا تو میں نے انار کو چھوڑا اور چل دیا بعدازاں راستے میں پڑا ہوا ایک شخص دکھائی دیا اس پر بھڑیں چمٹی ہوئی تھیں اور اس کو السلام علیکم کہا تو اس نے بھی جواباً کہا وعلیکم السلام اے ابراہیم۔ میں نے دریافت کیا کہ تو نے مجھے کس طرح پہچانا ہے تو اس نے جواب دیا کہ جو اللہ تعالی کو پہچان لے اس پر دیگر کوئی چیز پوشیدہ نہیں رہتی۔

میں نے کہا کہ میں نے دیکھا ہے کہ اللہ تعالی کے ساتھ تیرا خاص حال ہے تو کیا تو اس نے اس سے دعا نہیں کی ہے کہ تجھ کو ان بھڑوں سےچھٹکارا دے اس نے جواب میں کہا کہ میں نے بھی اللہ تعالی کے ساتھ تیرا حال دیکھا ہے کیا تو نے اس سے درخواست نہیں کی کہ تجھے انار کی شہوت سے نجات عطا فرمائے کیوں کہ انار کی تکلیف انسان کو آخرت میں ہوتی ہے۔ اور ان بھڑوں کا رنج صرف اس دنیا میں ہی ہے یہ صرف نفس کو کاٹتی ہے جبکہ شہوت دلوں کو کاٹنے والی ہے ازاں بعد میں نے اسے وہیں چھوڑا اور چل دیا۔ شہنشاہوں کو بھی شہوت اپنا غلام بنا لیا کرتی ہے جب کہ صبر کر کے غلام بادشاہ بن جاتے ہیں۔ آپ یوسف علیہ السلام اور زلیخا کا حال ہی دیکھ لیں صبر کے باعث یوسف علیہ السلام تو مصر کے حکمران ہو گئے۔ اور زلیخا شہوت کی وجہ سے حقیر اور فقیر بن کر رہ گئی کیوں کہ زلیخا نے یوسف علیہ السلام کی محبت پر صبر کا دامن چھوڑ دیا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: