صدقۂ فطر کب ادا کیا جائے؟

ڈاکٹر محمد رضی الاسلام ندوی سوال : صدقۂ فطر کی اہمیت کیا ہے ؟ یہ کب ادا کیا جانا چاہیے ؟

جواب : صدقۂ فطر کی ادائیگی کی بہت تاکید کی گئی ہے _ حضرت عبد اللہ بن عباس رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں : فَرَضَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ زَكَاةَ الْفِطْرِ طُهْرَةً لِلصَّائِمِ مِنَ اللَّغْوِ وَالرَّفَثِ وَطُعْمَةً لِلْمَسَاكِينِ (ابو داؤد :1609، ابن ماجۃ : 1827) ” رسول اللہ ﷺ نے زکاۃ الفطر کو فرض قرار دیا ہے _ یہ روزہ دار کی لغو باتوں اور لغو کاموں سے پاکیزگی کا ذریعہ ہے اور اس کے ذریعے مسکین لوگوں کو کچھ کھانے کو مل جاتا ہے _” اس حدیث سے صدقۂ فطر کی اہمیت واضح ہوتی ہے اور اس کا مقصد بھی عیاں ہوجاتا ہے _ صدقۂ فطر سے اصلاً غریبوں کی مدد مقصود ہے _ یوں تو رمضان المبارک شروع ہوتے ہی صدقۂ فطر نکالا جاسکتا ہے ، لیکن اسے نصف رمضان کے بعد نکالا جانا چاہیے _ حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہ اور بعض دیگر صحابۂ کرام کا معمول تھا کہ وہ عید الفطر سے ایک دو روز قبل اسے نکالا کرتے تھے _ صدقۂ فطر کا وجوب عید الفطر کا چاند نکلتے ہی ہوجاتا ہے اور اس کا آخری وقت عید کی نماز ہے _ نماز سے قبل لازماً اسے ادا کردیا جانا چاہیے ، ورنہ اس کی حیثیت عام صدقات کی ہوجاتی ہے _ اللہ کے رسول ﷺ کا ارشاد ہے : مَنْ أَدَّاهَا قَبْلَ الصَّلَاةِ فَهِيَ زَكَاةٌ مَقْبُولَةٌ، وَمَنْ أَدَّاهَا بَعْدَ الصَّلَاةِ فَهِيَ صَدَقَةٌ مِنَ الصَّدَقَاتِ. (ابو داؤد :1609، ابن ماجۃ : 1827) ” جس نے (عید الفطر کی ) نماز سے قبل(صدقۂ فطر) ادا کردیا وہ بارگاہِ الٰہی میں مقبول ٹھہرے گا اور جس نے اسے نماز کے بعد ادا کیا تو اس کی حیثیت عام صدقات کی ہوجائے گی _” [ شائع شدہ : آن لائن ماہ نامہ ہادیہ، ماہ مئی 2021 ]

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: