مرد چارہی ہیں

حضرت عیسی علیہ السلام نے فرمایا ہے تم رات کو سفر کرنے والوں کے واسطے کس طرح راستہ صاف کرو گے تم تو ظالم اور زیادتی کے مرتکب لوگوں کا ساتھ دیتے ہو۔اس سے معلوم ہوتا ہے کہ تحصیل علم کے بعد بھی بڑا خطرہ ہے کیونکہ عالم کا حال ایسا ہے کہ وہ یا دائمی ہلاکت کی طرف رخ کیا جاتا ہے اور یا دائمی سعادت پارہا ہے اور اگر اس نے تحصیل علم کی مگر سعادت نہ حاصل کی تو اس کو سلامتی میسر نہ ہوئی۔

حضرت عمر نے فرمایا ہے کہ میں علم والے منافق کو سب سے بڑھ کر خوفناک جانتاہوں پوچھا گیا کہ وہ کس طرح منافق ہوگا اور علم والا بھی تو فرمایا کہ زبان کا علم ہو جبکہ دل اور عمل ہر دو کا وہ جاھل ہو۔ حضرت حسن نے فرمایا ہے ایسے حضرات میں سے تم نہ ہو جاؤ جو علماء کا علم جمع کریں اور حکماء کی حکمت،دانائ بھی اکٹھی کر لیں اور عمل کے لحاظ سے وہ احمقوں کے طریقے پر چلیں۔ حضرت ابو ہریرہ سے ایک شخص نے عرض کیا کہ میں علم حاصل کرنے کا ارادہ کیے ہوئے ہیں لیکن مجھے یہ بھی خوف ہے کہ اس کو برباد نہ کرلوں آپ نے فرمایا علم کو چھوڑ دیا جائے تو بھی وہ علم کو برباد کرنا ہی ہوتا ہے۔ لوگوں نے حضرت ابراہیم بن عینیہ سے سوال کیا کہ تمام لوگوں سے زیادہ طویل ندامت کا سامنا کسے ہوگا فرمایا دنیا میں اسے ہوگی جو اس کا شکر گزار نہ ہو جو اس سے نیکی کرتا ہے اور بوقت موت اس عالم کو ہوگی جو افراط و تفریط کا ارتکاب کرتا ہے۔ حضرت خلیل بن احمد نے فرمایا ہے کہ مرد چارہی ہیں۔

1۔ ایسا مرد جو جانتا ہوں اور یہ بھی معلوم ہو اسے کہ وہ بھی جانتا ہے یہ عالم ہے اس کی اطاعت کرو۔

2۔ ایسا مرد جو جانتا ہوں لیکن اسے معلوم نہیں کہ وہ بھی جانتا ہے یہ سویا ہوا ہے اسے بیدار کرو۔

3۔ وہ مرد جو نہیں جانتا اور اسے معلوم ہے کہ وہ نہیں جانتا یہ ہدایت چاہتا ہے اس کو ہدایت دے دو اور علم دو۔

4۔ وہ جو جانتا نہیں اور سمجھتا یہ ہے کہ وہ کچھ جانتا ہے وہ جاھل ہے اس سے دور رہو۔

حضرت سفیان ثوری نے فرمایا ہے جس وقت آدمی علم کی طلب میں رہے وہ عالم ہوتا ہے اور جب وہ یہ سوچ لیتا ہے کہ میں عالم ہو گیا ہوں وہ جاھل بن جاتا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: