رات کو نماز پڑھتا اور صبح کو چوری کرتا

جناب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے عرض کیا گیا کہ فلاں شخص ہے جو رات کو نماز پڑھا کرتا ہے اور صبح ہوتی ہے تو چوری کرتا ہے آنحضرت نے فرمایا کہ جلدی ہی اس کو نماز برائی سے روک دے گی۔رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا ہے اس پر اللہ رحم فرمائے جو دوران شب اٹھ کر نماز ادا کرے پھر وہ اپنی زوجہ کو بیدار کرے اگر وہ اٹھنے سے انکار کرتی ہو تو اس کے چہرے پر پانی کے چھینٹے مارے پھر وہ اپنے شوہر کو بیدار کریں کہ وہ بھی نماز ادا کرے اگر وہ انکار کرے اٹھنے سے تو اس کے چہرے پر پانی چھڑک دے۔

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد ہے جو آدمی رات کے وقت جاگ جاگے اور اپنی بیوی کو جگا دے پھر وہ دونوں دو رکعت نماز پڑھے تو اس کو بہت زیادہ ذکر کرنے والے مردوں میں لکھ دیا جائے گا اور اس عورت کو بہت ذکر کرنے والیوں میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا ہے نماز فرض کے بعد قیام شب سب سے افضل ہے یعنی تہجد کی نماز۔ حضرت عمر بن خطاب سے مروی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ہے جو شخص اپنا ورد کیے بغیر رات کو سو جاتا ہے تو اس کو صبح اور دوپہر کے درمیان پڑھ لیں یعنی نماز تہجد بھی رہ جائے تو وہ بھی تو اس کے حق میں وہی کچھ لکھا جاتا ہے جیسے کہ رات کو ہی پڑا ہو۔ روایت کیا گیا ہے امام بخاری مندرجہ ذیل دو اشعار کا زیادہ تذکرہ رکھتے تھے۔

فراغت کے دوران ایک رکوع اور سجود کو غنیمت سمجھو شاید کہ اچانک ہی تجھے موت وارد ہو جائے۔ میں نے متعدد تندرستوں کو دیکھا جو مرض میں مبتلا نہ تھے کہ اچانک ہی ان کی جان نکل گئی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: