عربوں کی بدقسمتی یہ ہے

مسلمان حکومتیں تو اسرائیل کا کچھ نہیں بگاڑ سکتیں ، بس اللہ تعالیٰ ہی ظالم و جارح اسرائیل کو غارت کر سکتا ہے ۔ ہم ایسے کمزور مسلمان ایسی ہی اُمید رکھ سکتے ہیں ۔ اب تک سات مسلمان ممالک (ترکی ، مصر، اُردن ، متحدہ عرب امارات ، بحرین ، مراکش ، سوڈان) غاصب اسرائیل کو تسلیم کر چکے ہیں ۔

ہم پاکستانی یہ مناظر بڑے دکھ کے ساتھ دیکھنے پر مجبور ہیں۔ ہمارے قائد اعظم محمد علی جناح ؒ نے تو تحریکِ پاکستان کے دوران ہی یہ بات واضح کر دی تھی کہ جب تک مسئلہ فلسطین حل نہیں کیا جاتا، اسرائیل کو تسلیم کرنے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا ۔ ایسے میں اگر ہم مولانا سید ابو الاعلیٰ مودودی ؒ کے ارشاداتِ گرامی پر مبنی معرکہ خیز کتاب ’’ مجالسِ سید مودودیؒ ‘‘ کا مطالعہ کریں تو حیرت ہوتی ہے کہ انھوں نے برسوں قبل اسرائیل کے پھیلتے زہر سے ہم سب کو آگاہ کر دیا تھا مثال کے طور پر کتاب مذکور کے صفحہ
89پر مولانا مودودی ؒکے یہ الفاظ :’’ افریقہ میں مسلمانوں کو بچانے کے لیے ضروری ہے کہ مسلمان حکومتیں اس طرف مکمل منصوبہ بندی کے ساتھ توجہ دیں ۔ افریقہ کے تقریباً چار ہزار طلبہ اس وقت اسرائیلی ریاست کے اخراجات اور وظیفوں پر تعلیم حاصل کررہے ہیں ۔ اس طرح اسرائیل بڑی تیزی کے ساتھ افریقہ میں اپنے اثرات میں اضافہ کررہا ہے ۔ مسلمان ملکوں کو چاہیے کہ ان میں سے ہر ایک مسلم افریقی طلبہ کو وظائف پر بلائے اور انھیں تعلیم و تربیت دی جائے ۔

ایسے لوگ ہی واپس جا کر اپنے ملکوں میں عیسائی اقلیت سے بھی ٹکر لے سکتے ہیں اور یہودی اثرات کو بھی ختم کر سکتے ہیں ۔‘‘اس قیمتی مشورے پر پاکستان سمیت کتنے مسلمان ممالک نے عمل کیا، یہ ہمارے سامنے ہے اور پھر اس غفلت کے نتائج بھی ۔ مولانا سید مودودیؒ یہ بات بھی افسوس سے کہتے تھے کہ اگر اسرائیل کے یہودی اپنے ہفتہ وار مذہبی دن (سبت) کی چھٹی کر سکتے ہیں اور اُن کا کاروبار بھی متاثر نہیں ہوتا تو ہم مسلمان ملک ہونے کے باوجود جمعہ کی چھٹی کیوں نہیں کر سکتے ؟ مولانا مرحوم نے اپنی عصری مجالس میں ایک بار یہ بات بھی تاسف کے ساتھ کہی: ’’اسرائیلی یہودیوں نے عبرانی زبان کو، جو دُنیا میں کہیں نہیں بولی جاتی تھی اور بالکل ایک مردہ زبان تھی ، دوبارہ زندہ کیا ۔ اب اس زبان میں بہت سے اسرائیلی اخبارات اور رسالے شایع ہوتے ہیں ۔ یہ ان کی قومی زبان ہے۔ ہم نہ جانے کیوں اُردو کو اختیار کرتے ہُوئے شرماتے ہیںجب کہ اُردو ، عبرانی کے مقابلے میں کہیں زیادہ ترقی یافتہ ہے۔‘‘سید مودودیؒ نے یہ مشورہ آج سے تقریباً 50سال قبل دیا تھا کہ ’’مجالسِ سید مودودیؒ ‘‘ 1965 سے 1968 تک کی مجالس کی رُوداد ہے ۔

نصف صدی گزرنے کے باوجود ہم نے اُردو کو رتی برابر بھی اہمیت نہیں دی ۔ البتہ کئی پاکستانی حکومتوں نے اس بارے کئی خوش کن وعدے اور دعوے کئی بار کیے ہیں ۔ ایک مجلس میں مولانا سید مودودیؒ نے ایک سوال کے جواب میں فرمایا :’’عربوں کی بدقسمتی یہ ہے کہ ان میں کثرت سے اسرائیل کے جاسوس موجود ہیں ۔ یہ جاسوس یہودی ہوتے ہُوئے بھی عرب معلوم ہوتے ہیں کیونکہ یہ عربی مادری زبان کی طرح بولتے ہیں ۔ یہ لوگ دو تین پشتوں سے فلسطین کے علاقے میں اور عربوں کے درمیان رہائش پذیر رہے ہیں ۔ کوئی شک نہیں کر سکتا کہ یہ اسرائیل کے جاسوس ہو سکتے ہیں، مگر گزشتہ جنگ( جون1967) میں اس کا پورا ثبوت مل گیا۔ اس کے مقابلے میں عربوں کا جاسوسی کا نظام بہت کمزور ہے ۔‘‘(صفحہ206) ۔ جون1967کی عرب اسرائیل جنگ میں مصر کے ساتھ شام اور اُردن بھی اسرائیل سے بُری طرح شکست کھا گئے تھے ۔ عالمِ اسلام میں عمومی طور پر اور عالمِ عرب میں خصوصی طور پر یہ بات بڑی حیران کن تھی کہ مصر کو اسرائیل سے کیسے شکست ہو گئی حالانکہ جنگ سے پہلے مصر بڑے دھڑلے اور بلند آہنگی سے اسرائیل کے خلاف اپنی بھرپور جنگی تیاریوں کا بہت پروپیگنڈہ کرتا رہا تھا۔

مصر کے صدر جمال ناصر کے قائم کردہ مصری ریڈیو ’’صوت العرب‘‘ نے بھی اس سلسلے میں بہت شور مچا رکھا تھا لیکن میدانِ جنگ میں مصر ، اسرائیل سے پِٹ گیا ۔ مصری شکست کی وجہ کیا بنی؟ مولانا سید مودودیؒ نے اس کا تجزیہ کرتے ہُوئے فرمایا :’’اسرائیل کے خلاف مصری صدر کے بلند آہنگ پروپیگنڈے ہی نے مصر کو مروایا۔ مصری پروپیگنڈے کے جواب میں اسرائیل نے دُنیا بھر میں واویلا مچایا کہ دیکھیے مصر ایسا بڑا ملک، اسرائیل ایسے چھوٹے سے ملک کو ہڑپ کرنا چاہتا ہے۔ اس واویلے سے متاثر ہو کر امریکا سمیت مغربی ممالک نے بھی اسرائیل کی خوب مالی اور عسکری مدد کی ۔ اور یوں مصر میدانِ جنگ میں بھی ہار گیا اور عالمی سفارتی میدان میں بھی ‘‘۔یہ تجزیہ پڑھ کر راقم حیران رہ گیا ہے اور مولانا کے تجزیے کی داد دیے بغیر نہیں رہ سکتا۔ اسرائیل کا مقابلہ کرنے کے لیے کاش ، عالمِ اسلام کے حکمران مولانا سید ابو الاعلیٰ مودودیؒ کی تجاویز پر عمل کر سکتے ۔ سچی بات یہ ہے کہ آج اسرائیلی دہشت گردیوں کے سامنے سارا عالمِ اسلام بے بس ہے ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: