پڑوسی کے حقوق

پڑوسی کے حقوق اسلامی اخوت کے علاوہ ہوتے ہیں جو حق ایک مسلم بھائی کا ہوتا ہے وہی حق ایک پڑوس میں رہنے والے کا ہوتا ہے نیز عام مسلمانوں سے زیادہ پڑوسی کا ایک مخصوص حق تک بھی ہوتا ہے۔رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد ہے کہ پڑوسی تین ہوتے ہیں۔

1۔ پڑوسی جو ایک حق رکھتا ہے۔ 2۔ روسی جو دو حقوق رکھتے ہیں۔ 3۔ اور وہ پڑوسی جو تین حقوق رکھتا ہے۔
تین حقوق والا پڑوسی مسلمان اور قرابت والا ہوتا ہے اس کو پڑوسی ہونے کا حق مسلمان ہونے کا حق اور اسے داری کا حق حاصل ہوتے ہیں دو حقوق والا پڑوسی مسلمان ہونے کا حق اور رشتے داری کا حق حاصل ہوتے ہیں دو حقوق والا پڑوسی مسلمان ہونے کا حق اور پڑوسی ہونے کا حق رکھتا ہے اور ایک حق والا پڑوسی مشرک ہوتا ہے صرف پڑوسی ہونے کا حق حاصل ہوتا ہے۔ یہاں غور فرمائیں کہ ایک پڑوسی گووہ مشرک ہے اسے پڑوسی ہونے کا حق دیا گیا ہے۔رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد پاک ہے تیرے پڑوس میں جو بھی ہو تم اس کے ساتھ ایک اچھے پڑوسی کی حیثیت سے رہوں تو تم مسلمان ہو گے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ہے کہ مجھے پڑوسی کے بارے میں ہمیشہ ہی جبرائیل علیہ السلام وصیت کیا کرتے تھے حتی کہ میں یہ خیال کرنے لگا کہ وہ اس کو وارث قرار دے دیں گے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا ہے جو شخص اللہ پر ایمان رکھتا ہے اور یوم آخرت پر اس کو چاہیے کہ وہ اپنے پڑوسی کی عزت اور احترام ملحوظ رکھے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: