بیٹیوں اور بہنوں کے لیے خصوصی پیغام

ایک بار ایک لڑکی نے مولانا سے کہاکہ ایک بات پوچھوں؟ مولانا نےکہا؛ بولو بیٹی کیا بات ھے؟ لڑکی نے کہا ہمارے سماج میں لڑکوں کو ہر طرح کی آزادی ہوتی ہے ! وہ کچھ بھی کریں؛ کہیں بھی جائیں، اس پر کوئی خاص روک ٹوک نہیں ہوتیاس کے بر عکس لڑکیوں کو بات بات پر روکا جاتا ہے۔

یہ مت کرو! یہاں مت جاو! گھر جلدی آجاؤ !٠یہ سن کر مولانا مسکرائے اور کہا بیٹی آپ نے کبھی لوہے کی دکان کے باہر لوہے کے گودام میں لوہے کی چیزیں پڑیں دیکھیں ہیں ؟ یہ گودام میں سردی ٠گرمی ٠ برسات ٠رات٠ دن٠ اسی طرح پڑی رہتی ہیں ٠٠ اس کے باوجود ان کا کچھ نہیں بگڑتا اور ان کی قیمت پر بھی کوئی اثر نہیں پڑتا٠ لڑکوں کی کچھ اس طرح کی حیثیت ہے سماج میںاب آپ چلو ایک سنار کی دکان میں۔ ایک بڑی تجوری اس میں ایک چھوٹی تجوری اس میں رکھی چھوٹی سُندر سی ڈبی میں ریشم پر نزاکت سے رکھا چمکتا ہیرا٠۔۔کیو نکہ جوہری جانتا ہے کی اگر ہیرے میں ذرا بھی خراش آ گئی تو اس کی کوئی قیمت نہیں رہے گی۔۔اسلام میں بیٹیوں کی اہمیت بھی کچھ اسی طرح کی ھے۔ پورے گھر کو روشن کرتی جھلملاتے ہیرے کی طرح ذرا سی خراش سے اس کے اور اس کے گھر والوں کے پاس کچھ نہیں بچتا بس یہی فرق ہے لڑکیوں اور لڑکوں میں پوری مجلس میں خاموشی چھا گئ اس بیٹی کے ساتھ پوری مجلس کی آنکھوں میں چھائی نمی صاف صاف بتا رہی تھی لوہے اور ہیرے میں فرق آپ سے التجا ہے کہ یہ پیغام اپنی بیٹیوں بہنوں کو ضرور سنائیں، دکھائیں اور پڑھائیں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: