عورت کا اجر

ایک حق شوہر کو یہ بھی ہے کہ اس کی اجازت حاصل کئے بغیر عورت گھر میں سے کوئی چیز کسی کو ہرگز نہ دے اور اگر وہ دے دے گی تو عورت پر اس کا گناہ ہوگا اور اس کا ثواب مرد کو حاصل ہوگا ۔ ایک حق یہ بھی مرد کو حاصل ہے کہ اگر خاوند کی اجازت حاصل نہ ہو تو عورت نفل روزہ نہ رکھے اور اگر بلا اجازت وہ روزہ رکھ لے گی اور بھوکی اور پیاسی رہے گی تو وہ روزہ قبول نہیں ہوگا .

نیز عورت اگر بلا اجازت خاوند گھر سے نکلے تو اس پر فرشتے لعنت کرتے رہتے ہیں جب تک وہ لوٹ کر گھر میں داخل نہ ہو جائے یا توبہ نہ کریں۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد ہے اگر میں یہ حکم فرماتا ہے کہ کوئی کسی دوسرے کو سجدہ بجا لائے تو عورت کو حکم کر دیتا کہ وہ اپنے خاوند کو سجدہ کرے اس لیے کہ اس کا حق بہت بڑا ہے ۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا ارشاد پاک ہے کہ عورت اس وقت اللہ کے قریب ہوتی ہے جب وہ اپنے گھر ہو عورت کی نماز گھر کے صحن میں بجائے مسجد کے افضل ہوتی ہے اور گھر کے صحن کے بجائے کمرے کے اندر پڑے تو وہ افضل نماز ہے اور سامنے کے کمرے کے بجائے اگر اندر والے کمرے میں نماز پڑھے تو افضل ہوگی ۔ اس میں پردہ بھی ملحوظ رہتا ہے یہی وجہ ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ہے کہ تمام تر برہنگی ہے جس وقت وہ باہر آئے شیطان اس کو جھانکنے لگتا ہے ۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا یہ بھی ارشاد ہے کہ عورت کی دس بے پردگیاں ہیں وہ نکاح کر لے تو اس کا ایک پردہ شوہر ہوتا ہے اور وہ مر جائے تو قبر اس کے لیے نو پردے ہوتی ہے ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: