آپﷺ نے خط کھینچ کر ایک مثال کیوں دی

حضرت عبداللہ بن مسعود نے فرمایا ہے کہ ایک روز ہمارے سامنے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک خط کھینچ لیا اور فرمایا یہ راہ ہے اللہ کی طرف پھر اس کے دائیں اور بائیں جانب متعدد آپ نے خط کھینچ دیے اور فرمایا یہ تمام وہ راہیں ہیں کہ ہر راہ پر شیطان موجود ہے اور وہ اپنی جانب بلا رہا ہے اس کے بعد آنحضرت نے یہ آیت کریمہ پڑھی۔( اور بلاشبہ یہ میری سیدھی راہ ہے اس کی پیروی کرو اور دیگر راہوں پر نہ چلو وہ تم کو اس کی راہ سے دور لے جائیں گی۔ الانعام154)۔

یہاں پر ہم ایک مثال دیتے ہیں اس کی پوشیدہ راہوں کی جن پر وہ اہل علم کو اور عابد حضرات کو فریب دیا کرتا ہے جو شخص سلوک کے طریق پر گامزن ہونا چاہتا ہوں وہ اسے پیش نظر رکھے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا ہے کہ قوم بنی اسرائیل میں ایک راہب تھا شیطان نے ایک لڑکی پر حملہ کیا آسیب میں مبتلا کردیا وہ اس کے گلے کو دباتا تھا اور اس کے گھر والوں کے دل میں یہ خیال آیا کہ فلاں راہب ھی اس کا علاج کر سکتا ہے بس لڑکی ساتھ لیے وہ راہب کے پاس آئے مگر اس نے وہ لڑکی اپنے ساتھ رکھنے سے انکار کر دیا انہوں نے بڑا اصرار کیا تو راہب مان گیا کچھ دنوں تک علاج کی خاطر وہ لڑکی کے پاس قیام پذیر رہیں شیطان اس راہب کے پاس آ گیا اور اس کو تیار کرنے لگا کہ وہ لڑکی سے جماع کرے حتی کہ راہب نے لڑکی سے مباشرت کرلی اور لڑکی حمل پذیر ہوگئی۔ اس کے بعد شیطان نے راہب کے دل میں یہ بات ڈال دی کہ جب لڑکی کے گھر والے آئیں گے وہ رسوا ہو گا لہذا لڑکی کو قتل کر دینا چاہیے بس راہب نے اس کو قتل کر دیا۔

اور دفن بھی کر دیا لڑکی کے گھر والوں نے آکر راہب سے لڑکی کے بارے میں دریافت کیا تو اس نے کہا کہ وہ تو مر چکی ہے انہوں نے راہب کو پکڑ کر قتل کرنا چاہا کہ شیطان راہب کے پاس آ گیا اور کہنے لگا کہ اس لڑکی کا گلے کو میں دبایا کرتا تھا اور اس کے گھر والوں کو بھی تمہارے پاس آنے کی ترغیب میں نے ہی دی ہے۔ اب تو میرا حکم ماننے سے تو بچ سکے گا میں ان سے تجھے نجات دوں گا راہب نے پوچھا مجھے کیا کرنا ہے شیطان نے کہا تو دو مرتبہ مجھ کو سجدہ کر اس راہب نے دو مرتبہ اس کو سجدہ کیا اب شیطان کہنے لگا مجھے تجھ سے کوئی غرض نہیں ہے اس مفہوم میں اللہ نے فرمایا ہے۔( شیطان کی طرح کہ اس نے جب انسان کو کہا تو کفر کر بس جس وقت اس نے کفر کر دیا تو اسے کہنے لگا میں تجھ سے بیزار رہوں)۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: