عنایتِ رحمتہ للعالمین صلی ﷲ علیہ وآلہ وسلم

ایک بُزُرگ بالکل اَن پڑھ تھے۔مگر قرآن پاک دیکھ کر نہایت صحیح اور خوش الحانی سے پڑھتے تھے۔لوگوں کو تعجب تھا کہ لِکھنا پڑھنا نہ جانتے ہوئے قرآن مجید اس قدر صاف کیون کر پڑھ لیتے ہیں۔وجہ دریافت کی تو فرمایا کہ:” میں مدینہ منوّرہ میں مقیم تھا اور رسول ﷲ صلی ﷲ علیہ وآلہ وسلم کی خدمت میں اِلتجا کرتا تھا کہ مجھے قرآن مجید کی تلاوت پر قُدرت ہو جائے۔

ایک رات سویا تو رسول ﷲ صلی ﷲ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا کہ ﷲ نے تیری دُعا قبول فرما لی۔اب قرآن دیکھ کر پڑھ۔صبح اُٹھا تو قرآن حکیم دیکھ کر پڑھنا شروع کِیا۔سب مجھ پر آسان ہو گیا۔اب جہاں کہیں غلطی ہوتی ہے تو خود حضور صلی ﷲ علیہ وآلہ وسلم بتا دیتے ہیں کہ فلاں مقام پر یوں نہیں یوں ہے۔” (سِرتُ النّبی بعد از وصال النّبی صلی ﷲ علیہ وآلہ وسلم،حِصّہ ٢،صفحہ ١٦٣ )

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: