اللہ کن دو لوگوں کو دیکھ کر مسکراتا ہے؟

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالی عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا اللہ سبحانہ و تعالیٰ ایسے دو آدمیوں کو دیکھ کر مسکراتا ہے جن میں سے ایک نے دوسرے کا قتل کیا ہوگا پھر بھی دونوں جنت میں داخل ہوں گے ان میں سے ایک تو اللہ کی راہ میں لڑتے شہید ہوا تھا پھر اللہ نے قاتل کو بھی توبہ کی توفیق بخشی اور وہ مسلمان ہو گیا اور پھر وہ بھی شہید ہو گیا اللہ تعالی دو ایسے آدمیوں کو دیکھ کر ہوتا ہے جو دونوں ہی جنت میں جائیں گے

باوجود اس کے کہ مسلمان اللہ کے دین کی سربلندی میں لڑ رہا ہوگا اور ایک کافروں سے قتل کر دے گا اور وہ جنت میں چلا جائے گا پھر اللہ کا قاتل کو بھی توبہ کی توفیق دے گا اور مسلمان ہو جائے گا اور پھر اللہ کی راہ میں جہاد کرتا ہوا وہ بھی شہید ہو جائے گا حضرت ابوہریرہ رضہ اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے ساتھ تھے اتنے میں ایک دھماکے کی آواز آئی رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا تم جانتے ہو یہ کیا ہے ہم نے عرض کیا اللہ اور اس کے رسول خوب جانتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ایک پتھر ہے جو جہنم میں پھینکا گیا تھا ستر برس پہلے اب اس کی اہمیت پہنچا ہے اور اب وہ اس میں پہنچا ہے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا انسان کبیرہ گناہوں سے اجتناب کر رہا ہوں تو پانچ نمازیں ایک جمعہ سے دوسرے جمعہ تک ایک رمضان سے دوسرے رمضان تک کے عرصے میں ہونے والے گناہوں کو مٹانے کا بنتی ہیں دوسرا اس شخص کو دیکھ کر اللہ تعالی مسکراتا ہے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ۔ ایک وہ ہے جو رات میں اپنے بستر اور لحاظ سے اٹھ کر وضو کرتا ہے اور نماز پڑھتا ہے تو اللہ تعالی فرشتوں سے پوچھتا ہے میرے بندے کو یہ تکلیف برداشت کرنے پر کس چیز نے ابھارا فرشتہ جواب دیتے ہیں تیری رحمت کے امیدوار ہیں اور تیرے عذاب سے ڈرتا ہے اللہ تعالی فرشتوں سے فرماتا ہے گواہ ہو جاؤ اس کی امیدیں پوری کر دی گئی ہیں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: