پہلے تولو پھر بولو

امام کسائی کا شمارسات مشہور قراء میں ہوتا تھا اور یزید بھی معروف اور اچھے قراء سے تھے۔ یہ دونوں خلیفہ ہارون رشید کے زمانہ حکومت میں بغداد کی ایک مسجد میں لوگوں کو قرآن کی تعلیم دیا کرتے تھے۔ امام کسائی ہارون رشید کے صاحبزادے امین کی تربیت وتادیب پر مامور تھے۔ اور یزید مامون کو ادب سکھلاتے تھے۔

ایک مرتبہ امام کسائی اور یزید دونوں خلیفہ ہارون رشید کی خدمت میں حاضر تھے ۔اتنے میں نماز مغرب کا وقت آ گیا ۔ لوگوں نے امام کسائی کو امامت کے لئے آگے بڑھا یا۔ انہوں نے لوگوں کو نماز پڑھائی لیکن سورۃ الکافرون کی تلاوت میں اٹک اٹک جاتے تھے، چنانچہ غلط پڑھی یا بھول گئے ۔ جب سلام پھیرا تو قاری یزید نے کہا : اہل کوفہ کے امام و قاری اور وہ بھی سورۃ الکافرون میں بھول جائیں یا اٹک جائیں یا غلطی کریں؟ جب عشاء کی نماز کا وقت آیا تو یزید نے لوگوں کو نماز پڑھائی لیکن ان پرقرات مشکل ہو گئی اور سورۃ الفاتحہ کی تلاوت میں غلطی اور بھول گئے۔

جب نماز سے سلام پھیرا تو امام صاحب نے فرمایا : اپنی زبان کی حفاظت کا اہتمام رکھو اور کوئی ایسی بات مت کہو کہ کہیں اس کی وجہ سے تم آزمائش میں گرفتار نہ ہوجاؤ کیوںکہ آزمائش اکثر و بیشتر انسان کی گفتگو کے باعث ہی آتی ہے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: