بغداد کا ایک مفلس طالب علم

حفاظ الحدیث حجاج بغدادی جب حضرت شبا بہ محدث رحمۃ اللہ علیہ کے یہاں علم حدیث پڑھنے کے لیے جانے لگے تو ان کی پونجی کی کل کائنات اتنی ہی تھی کہ ان کی غریب ماں نے 100 کلیجے پکا دیے تھے۔

جن کو وہ ایک مٹی کے گھڑے میں بھر کر اپنے ساتھ لے گئے روٹیاں تو مانے پکا دی تھی ۔ہو نہار طالب علم نے سالن کا خود انتظام کر لیا اور سال بھی اتنا کثیرا لطیف کے سینکڑوں برس گزرنے کے باوجود کبھی کچھ نہیں ہوا اور ہمیشہ تازہ ہی رہا وہ کیا دریائے دجلہ کا پانی۔

روزانہ ایک کلچا دریا کے پانی میں تر کرکے کھا لیتے تھے اور شبانہ روز انتہائی محنت کے ساتھ پڑھتے رہتے تھے۔ یہاں تک کہ جب کل ختم ہوگئے تو مجبور استاد کی درسگاہ کو خیرباد کہنا پڑا

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: