بدبخت اور نیک بخت میں فرق

اصمعی ایک اعرابی کے حوالے سے بیان کرتے ہیں کہ اس نے یہ واقعہ سنایا:میں اپنی بستی سے یہ سوچ کر نکلا کہ سب لوگوں سےزیادہ بدبخت اور نیک بخت فرد کے بارے میں معلومات حاصل کرو اور اسے تلاش کرو میں بستی بستی نگر نگر بدبخت اور نیک بخت ڈھونڈ رہا تھا ایک بستی سے میرا گزر ہوا

تو میں نے دیکھا کہ بوڑھے شخص کی گردن میں ایک رسی باندھی ہوئی ہے اور اس رسی کے ساتھ ایک بڑی بالٹی لٹک رہی ہے اس کے پیچھے ایک نوجوان تھا وہ اس رسی کو کھینچ رہا تھا جو بوڑھے کی گردن کے ساتھ بندھی ہوئی تھی ساتھ ساتھ وہ ا سے چابک سے مارتا بھی جا رہا تھا۔میں نے نوجوان سے کہا اس بوڑھے اور کمزور شخص کے بارے میں تجھے اللہ کا خوف نہیں ہے اس کی گردن میں تو پہلے ہی ایک رسی اور بڑی بالٹی لٹک رہی ہے جس سے یہ ہلکان اور پریشان ہیں اس کے باوجود تو اسے چابک سے بھی مار رہا ہے تو کتنا سفاک ہے۔ نوجوان کہنے لگا ہاں مگر میں تمہاری اطلاع کے لیے بتا دو کہ یہ میرا باپ ہے۔میں نے اس سے کہا اگر یہ تیرا باپ ہے تو میری دعا ہے کہ اللہ تجھے کوئی بھلائی نہ دے کیا کوئی اپنے ہی باپ کے ساتھ اس طرح کا ظالمانہ سلوک کرتا ہے؟ نوجوان بولا:” خاموش رہو تمہیں کیا معلوم یہ بھی اپنے باپ کے ساتھ ایسا ہی برتاؤ کرتا تھا جیسا مجھے اس کے ساتھ کرتے دیکھ رہے ہو اور پھر اسی طرح اس کا باپ بھی اس کے دادا کے ساتھ یہی کچھ کیا کرتا تھا”میں نے اپنی آنکھوں سے یہ سب کچھ دیکھ کر کہا:” بس یہی بڈھا سب سے زیادہ بدبخت ہے۔”اس واقعے سے معلوم ہوا کہ والدین کے ساتھ حسن سلوک کرنے والا اس دنیا میں سب لوگوں سے زیادہ نیک بخت اور خوش قسمت ہے اس کے برعکس سب سے بڑا بدبخت وہ ہے جو اپنے والدین سے برا سلوک کرتا ہے اور انہیں تکلیف دیتا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: