پہلوان کی بیٹی

کسی گاؤں میں ایک پہلوان رہتاتھا۔اپنے علاقے کا بہت مشہور اور جانا مانااسکی ایک ہی بیٹی تھی بہت لاڈ اور پیار سے پالی۔۔۔۔خوبصورت اور نازک سی بیٹی جوان ہوئی تو اسکی شادی کی فکر ہوئی۔

چونکہ پہلوان تھا۔اسلیئے بیٹی کے لیئے ایک پہلوان ہی پسند آیااونچا لمبا تنےہوئے بدن کا مالک۔۔۔گھنی موچھوں والاگھبرو زمیندار,نازو پلی بیٹی وداع کردی

چھے ماہ بھی ناگزرے تھے کہ پہلوان داماد نے بیٹی کومار پیٹ کر نکال دیا۔۔۔کہ گھر کا کوئی کام نہیں آتا اسے۔۔۔
باپ کادل بہت رنجیدہ ہوا۔۔۔مگر کسی کوکچھ نا کہا۔۔۔کہ فضول میں تماشا بنے گا۔۔۔۔۔بیوی سے کہا کہ اسے ہر چیز سکھاو۔۔۔جو گھرداری کے لیئے ضروری ہوتی۔۔۔ماں نے بیٹی کو جھاڑو پوچا۔۔۔کھاناپکانا۔۔۔سب سیکھیا۔۔چند ماہ بعد صلح صفائی ہوئی۔۔۔داماد کو بلایا۔۔۔معافی مانگی کہ شرمندہ ہیں لاڈ پیار میں گھرداری ناسیکھائی۔۔۔
چھے ماہ ناگزرے۔۔۔بیٹی پھر مار کھاکر میکے واپس اگئی۔۔۔کہ کوئی سیناپرونا نہیں آتا۔۔۔۔پھر پہلوان بہت دکھی ہوا۔۔۔پھر بیوی کو کہا اسے سیناپرونا سیکھاو۔۔۔۔
بیوی نے سلائی کڑھائی۔۔۔۔گوٹاکناری۔۔۔۔رضائیاں بچھائیاں۔۔۔یہاں تک کے پراندے اور ازاربندھ بھی سیکھائے۔۔۔پھر داماد کو بلایا۔۔۔غلطی کی معافی مانگی۔۔۔اور بیٹی رخصت کی۔

پھر چند ماہ گزرے۔۔۔بیٹی پھر نیل ونیل۔۔۔مار کھاکر میکے واپس۔۔کہ کھیت کھلیان نہیں سنبھال سکتی میرے ساتھ۔۔گائے بھینسوں کادودھ دوہنا نہیں آتا۔۔پہلوان بہت ہی دکھی۔۔۔رنجیدہ۔۔۔۔یااللہ کیسا نصیب ہے بیٹی کا۔۔۔خیر۔۔۔بڑی عزت تھی زمانے میں۔۔خاموش رہا۔۔۔بیٹی کوساتھ لے جاتا کھیتئ بھاڑی کے کام سیکھائے۔۔۔اور ایک بار پھر بیٹی بہت دعاوں کے ساتھ رخصت کی۔۔۔
پھر چند دن گزرے۔۔۔پھر بیٹی روتی میکے۔۔۔پہلوان نے سوال کیا بیٹی اب کیا ماجرہ ہوا۔۔۔۔کہنے لگی میرا شوہر کہتاہے تو آٹاگھوندھتے ہوئے ہلتی بہت ہے۔۔۔۔
پہلوان کو اب ساری بات سمجھ میں آئی۔۔۔اس کے داماد کو عادت پڑھ چکی تھی مارنے کی اور لت لگ گئی تھی بیوی پہ رعب جمانے کی۔۔۔کہنے لگا بیٹی۔۔۔۔میں تجھے سب سیکھایا۔۔۔مگر یہ نہیں سیکھایاکہ تو بیٹی کس کی ہے۔۔۔بیٹی حیران ہوئی۔۔۔۔مگر کچھ ناسمجھی۔۔۔۔
چند دن بعد داماد پہلوان کو احساس ہوا کہ بہت عرصہ گزرا نا سسر نا معافی مانگی نا بیٹی واپس بھیجی۔۔۔۔
خیرخبرلینے سسرال کے گھر گیا۔۔۔سسر نے دروازے پہ روک لیااور کہا۔۔۔انہی پیروں پہ واپس چلاجا۔۔۔آج کی تاریخ یاد رکھ لے۔۔۔پورے دوسال بعد آنا اور آکر بیوی لے جانا۔۔۔۔اگر اس سے پہلے مجھے تو یہاں نظر آیا تو ٹانگیں تڑواکر واپس بھیجوں گا۔۔۔داماد کو فکر ہوئی۔۔مگر انا آڑھے آئی۔۔۔اور لوٹ گیا۔

دن گزرتے رہے۔۔۔پہلوان بیٹی کو منہ اندھیرے کھیتوں میں لے جاتا۔۔۔اور سورج نکلنے پرگھر بھیجتا۔۔۔بیوی نے بارہا پوچھا مگر یہ راز نا کھلا۔۔۔
دوسال گزر گئے۔۔۔۔داماد بیٹی کو لینے آیا۔۔باپ نے خوشی خوشی رخصت کی۔۔۔۔
چند دن گزرے۔۔۔۔پہلوان داماد نے عادت سے مجبور۔۔۔چیخناچلانا شروع کردیا اور مارنے کے لیئے بیوی کی طرف ہاتھ بڑھایا۔۔۔۔بیوی نے کسی منجھے ہوئے پہلوان کی طرح شوہر کوبازوسے اٹھاکر زمین پر پٹخ دیا۔۔۔۔اور کہا۔۔۔
تو جانتاہے نا میں بیٹی کس کی کی ہوں۔۔۔۔وہ سمجھ گیا کہ اب کی بار دوسال میں باپ نے بیٹی کو کیا سیکھاکربھیجاہے
اور اسکے بعد پہلوان کو دوبارہ بیوی سے اونچی آواز میں بات کرتے نہیں دیکھاگیا۔۔۔۔اور بیٹی کبھی دوبارہ مار کھاکرمیکے نہیں آئی۔۔۔۔
باپ نے بیٹی کو کیاسیکھایا۔۔۔آپ بھی جان گئے ہوں گے۔۔۔
ہرچیز ماں کے سیکھانے کی نہیں ہوتی۔۔۔کچھ باتیں کچھ اعتماد باپ بھی بیٹیوں میں لاتاہے۔۔۔
اس لیئے میں سمجھتی ہوں جو دور جارہاہے۔۔۔اسمیں بیٹیوں کو اپنی حفاظت کرنا۔۔۔ضرور سیکھاناچاہیے۔۔۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: