اسلام مکمل ضابطہ حیات کامطلب

فقیر نے میرا ہاتھ پکڑا اور میری مُٹھی عجوہ کھجوروں سے بھر دی، فرمایا کھاؤ اور ساتھ بِٹھا کے فرمانے لگے بتاؤ تو “حیات” کِس کو کہتے ہیں ؟ میں نے کہا زندگی کو ؟ تو میرے سر پر ہلکی سی چپت لگا کر فرمانے لگے نہیں نکمے “حیات” تو وہ ھوتی ھے جِسے کبھی موت نہیں آتی۔

دیکھو نہ اللّٰه تعالی کا ایک ایک لفظ ہیرے یاقوت و مرجان سے زیادہ پیارا اور قیمتی اور نصیحتوں سے بھرپور ھے اللّٰه نے یہ نہیں کہا کہ اِسلام مکمل ضابطہ زندگی ھے بلکہ یوں کہا کہ مکمل ضابطہ “حیات” ھے اور حیاتی تو مرنے کے بعد شروع ھو گی جِسے کبھی موت نہیں آئے گی پھر گلاس میں میرے لیئے زم زم ڈالتے ھُوئے فرمانے لگے

میرے بیٹے اللّٰہ نے زندگی دی ھے “حیات” کو سنوارنے کے لیئے نہ کہ بگاڑنے کے لیئے تو یہ زندگی بھی بھلا کوئی “حیات” ھے جِسکو موت آ جائے گی اصل تو وہ “حیات” ھے جِسکو کبھی زوال نہیں کبھی موت نہیں تو زندگی ایسے گزارو کہ “حیات” سنور جائے اور میں زندگی میں تب پہلی بار سمجھا کہ اسلام مکمل ضابطہ “حیات” ھے کا اصل مطلب کیا ھے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: