لالچی بادشاہ

مڈاس ایک بہت مشہور بادشاہ تھا۔ وہ بہت لالچی تھا اور سونا جمع کرنے کا شوقین تھا۔ ہر وقت اپنے خزانے میں بیٹھا سونا گنتا رہتا تھا۔

ایک دن اس کی ملاقات ایک اجنبی سے ہوئی۔اجنبی نے بادشاہ کو بتایا کہ وہ اس کی کوئی بھی تمنا پوری کر سکتا ہے۔ مڈاس نے اس سے کہا کہ مجھے ایسی قوت دیدو کہ میں جس شے کو چھوؤں وہ سونا بن جائے۔

اجنبی نے اس کو یہ طاقت دے دی۔ اس نے بتایا کہ کل صبح جب تم نیند سے بیدار ہو گے تو تم اپنی اس طاقت کو استعمال کر استعمال کر سکتے ہوگے۔ صبح بادشاہ جاگا تو اس کے سر پر یہی سوار تھا کہ اسے ہر چیز کو سونا بنانا آتا ہے یا نہیں۔

اس نے جب بیڈ پر پڑی چادر کو ہاتھ لگایا تو وہ سونے کی بن گئی۔ بادشاہ کی خوشی کی کوئی انتہا نہ رہی اور وہ ناچنے لگا۔ اس نے تھوڑی سی دیر میں اپنے کمرے کی ہر چیز کو سونے کا بنا دیا۔ پھر اسے بھوک لگی تو اس نے ناشتہ منگوایا۔ جب اس نے پھلوں کو ہاتھ لگایا تو وہ بھی سونے کے بن گئے۔وہ تھوڑا سا پریشان ہوا کہ آگے کیسے کام چلے گا لیکن پھر وہ یہ سوچ سوچ کر خوش ہوتا رہا کہ جب تک اس کے پاس طاقت ہے جتنی چیزوں کو سونے کا بنا سکتا ہے بناتا جائے۔

اس نے کھڑکی سے نیچے باغ میں دیکھا تو اس کی بیٹی باہر چہل قدمی کر رہی تھی۔ اس نے اسے اوپر بلایا۔وہ کمرے میں داخل ہوتے ہی اس کے گلے لگ گئی اور یکدم سونے کے مجسمے میں تبدیل ہو گئی۔ بادشاہ بہت پریشان ہوا اور سپاہیوں کو بھیجا کہ اس اجنبی کو فوراً واپس بلا کر لائیں۔ جب اجنبی سے دوبارہ ملاقات ہوئی تو بادشاہ نے کہا کہ مجھے یہ قوت ہرگز نہیں چاہیے ہے۔

مجھے میری زندگی پہلے کی طرح لوٹا دو اور کسی طرح میری بیٹی کو ٹھیک کر دو۔ اس اجنبی نے کوئی ایسا عمل کیا کہ سب کچھ واپس نارمل ہو گیا اور مڈاس کا لالچ ختم ہو گیا۔ حاصل سبق غلط خواہشات ہمیشہ بربادی کی طرف لے کر جاتی ہیں۔ جب کوئی دعا یا کوئی تمنا پوری نہ ہو تو سمجھ جاؤ کہ اس میں کوئی بھلائی پنہاں ہے۔ جیسے انسان کسی چیز کو حاصل کرنے کا شدید خواہاں ہوتا ہے، کبھی اسے وہ چیز مل جائے تو اسے پتہ لگتا ہے کہ اسے وہ چیز کتنی مہنگی پڑ گئی۔ کسی چیز کے نہ ملنے پر بھی خدا کے شاکر رہو۔ سب سے بڑی بات یہ ہے کہ کہانیوں اور سپورٹس میں کھلاڑی یا کردار بدلے جا سکتے ہیں۔ ایک ذخمی ہو گیا تو اس کا متبادل اس کا کردار بخوبی ادا کر لیتا ہے مگر حقیقی زندگی میں اس کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: