فرمان نبوی ﷺ کا لحاظ

فرمان نبوی ﷺ کا لحاظ

مسجد نبوی ﷺ کا ایک دروازہ تھا جہاں سے اکثر عورتیں آیا کرتی تھیں اور جب عورتیں نہیں ہوتی تھیں تو کبھی کبھی مرد بھی اس دروازے سے آ جایا کرتے تھے.

ایک مرتبہ نبی علیہ السلام نے فرمایا کتنا اچھا ہوتا کہ اس دروازے کو عورتوں کیلئے چھوڑ دیا جاتا یہ سن کر مردوں نے اس دروازے سے آنا چھوڑ دیا حتی کہ حضرت عبداللہ بن عمران الفاظ کو سننے کے بعد پوری زندگی میں کبھی بھی اس دروازے سے مسجد نبوی میں داخل نہیں ہوۓ تھے سبحان اللہ ان کا ایک ایک کام نبی علیہ السلام کی اداؤں کا مظہر ہوا کرتا تھا اللہ رب العزت نے ان کو نبی علیہ السلام کا ایساعشق عطافرمایا تھا کہ ان کو نبی علیہ السلام کی ہر ہر بات یادرہی تھی انہوں نے اپنے اپنے دماغوں میں بھی اس علم کو یاد رکھا اور اپنے جسم کے اعضاء پر بھی اس علم پرعمل کے ذریعہ سے یاد میں تازہ رکھیں ۔

(خطبات ص ۸/۱۵۸)

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: