ایک خاتون کا قبول اسلام

ایک مرتبہ ہم امریکہ میں نماز پڑھ کر مسجد سے باہر نکلے سامنے مین روڈ تھا’ ہم دو آ دمی آپس میں بات چیت کر رہے تھے .

سامنے سڑک پر ایک خاتون تیزی کے ساتھ کار چلاتی ہوئی گزری لیکن چند میٹر آگے جا کر اس نے بریک لگا دی اس نے گاڑی موڑی اور ایک دومنٹ میں اس نے ہمارے قریب آ کر گاڑی کھڑی کر دی وہاں پر عام طور پر ایسا ہوتا ہے کہ آدمی جس منزل پر جار ہا ہو اس کے پاس اس کا پورا ایڈریس نہ ہوتو اسے پوچھنے کی ضرورت پیش آتی ہے چنانچہ ہم نے سوچا کہ ممکن ہے کہ یہ امریکن عورت راستہ بھول گئی ہو اور ہم سے کوئی پتہ معلوم کرنا چاہتی ہو۔ اس عاجز نے اپنے ساتھ والے دوست سے کہا کہ آپ جائیں اور اس سے پوچھیں کہ آپ کو ڈائریکشن کی ضرورت ہے؟

جب اس نے جا کر پوچھا تو وہ کہنے لگی نہیں میں تو اپنے گھر جارہی ہوں اور گھر کی ڈائریکشن تو ہر ایک کو آتی ہے نہیں کیا پتہ تھا کہ اللّٰہ تعالی اس کو دنیا کے گھر کی ہا۔۔ اصلی گھر راستہ دکھانا چاہتے تھے اس نے جب کہا کہ میں اپنے گھر جارہی ہوں تو ہمارے دوست نے

پوچھا کہ پھر آپ نے یہاں کیوں بر یک لگائی؟ اس کے جواب میں وہ کہنے لگی کہ یہ بندہ کون ہے؟

اس نے کہا کہ یہ بند و مسلمان ہے وہ کہنے لگی کہ اس سے پوچھو کہ کیا یہ مجھے بھی مسلمان بنا سکتے ہیں نہ نام کا پتہ اور ہی ایڈریس کا پتہ فقط نبی علیہ السلام کی سنتوں کو دیکھا اور اللہ تعالی نے اس کے دل میں ایسی تاثیرڈال دی کہ و ہیں گاڑی میں بیٹھے بیٹھے اس نے کلمہ پڑھ لیا۔ اس عاجز نے اسے اپنا رو مال دے دیا جس کو اس نے اپنا دوپٹہ بنالیا اور پھر اپنے گھر کو روانہ ہوگئی ۔

سبحان اللہ ( خطبات ذو الفقارص ۱۱۵/ ۷ )

Leave a Reply

Your email address will not be published.

%d bloggers like this: