جنات کا قبول اسلام

غرض آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی زبان مبارک سے کلام پاک سن کر یہ جنات اس وقت مسلمان ہو گئے ….اس سے پہلے یہ یہودی تھے.

اس بات کا اندازہ ان کی اس بات سے ہوتا ہے جو قرآن پاک میں بیان فرمائی گئی ہے کہ

“قـالـوا يـقـومـنـا انـا سـمـعنـا كـتـابـا انـزل من بعد
موسى… الخ“

” کہنے لگے کہ اے بھائیو! ہم ایک کتاب سن کر آئے ہیں جو موسی کے بعد نازل کی گئی ہے.“ (سورۃ التقاف آیت ۳۴۳۰) تو اس جگہ جنوں نے عیسی کے بعد نہیں کہا …. جس سے معلوم ہوا کہ وہ پہلے یہودی تھے ….ہاں البتہ یہ کہا جاسکتا ہے کہ وہ عیسائی ہی رہے ہوں مگر چونکہ بیٹی کی شریعت

نے موسی کی شریعت کو بھی برقرار رکھا تھا اس کو ختم نہیں کیا تھا…. اس لئے جنات نے موسی علیہ السلام کا نام لیا تھا…… یہاں جنات نے کتاب کہا ہے …. حالانکہ انہوں نے صرف چند آیتیں سنی تھیں …. جس کا مطلب یہ ہے کہ انہوں نے جو کچھ سنا اس کی بنیاد پر اس کا بھی اندازہ کر لیا جو اس وقت نازل نہیں ہوا تھا…. کیونکہ نہ پورا قرآن انہوں نے سنا اور نہ پورا قرآن اس وقت نازل ہوا تھا…..

( حوالہ دلائل النية ومدارج النبوة)

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: