امام ابوحنیفہ رح کی ذہانت وحکمت انوکھا واقعہ

امام ابوحنیفہ رح کی ذہانت وحکمت انکھا واقعہ

ایک مرتبہ وقت کے بادشاہ نے امام ابوحنیفہ رحمہ اللہ، امام شعبی رحمہ اللہ، امام ثوری رحمہ اللہ اور ایک اور فقیہ کی گرفتاری کا حکم دیا۔

وہ چاہتا تھا کہ ان چاروں میں سے کسی ایک کو قاضی القضاۃ یعنی جسٹس مقرر کر دے لیکن یہ چاروں بنا نہیں چاہتے تھے، چنانچہ پولیس والوں نے انہیں گرفتار کرلیا۔ راستے میں جب ایک جگہ وہ آرام کرنے کے لیے رکے ،اس وقت چوتھے فقیہ بیٹھے بیٹھے اس طرح اٹھے جیسے قضائے حاجت کی ضرورت ہو ۔ اس طرح وہ وہاں سے کھسک گئے ۔ پولیس والے انتظار میں رہے لیکن وہ نہ آۓ ۔ اب باقی تین رہ گئے ۔امام ابوحنیفہ رحمہ اللہ فرمانے لگے :

”میں اندازہ لگا سکتا ہوں کہ وہاں کیا ہوگا۔ دوسروں نے کہا:’ہاں لگایئے اندازہ کہنے لگے ، میں وہاں جا کر ایسی بات کہوں گا کہ خلیفہ منصور کے پاس اس کا جواب ہی نہیں ہوگا ۔ لہذا میں چھوٹ جاؤں گا شعی بھی کوئی حیلہ کر لیں گے ۔البتہ سفیان ثوری پھنس جائیں گے، چنانچہ ایسا ہی ہوا۔ جب تینوں حضرات کو دربار میں پہنچایا گیا تو امام معمی رحمہ اللہ ذرا آگے بڑھے اور جا کر خلیفہ منصور سے کہنے لگے:

’’آپ کے بیوی، بچوں کا کیا حال ہے؟ آپ کے محل کا کیا حال ہے؟ آپ کے اصطبل کا کیا حال ہے؟ آپ کے گدھوں کا کیا حال ہے؟ آپ کے گھوڑوں کا کیا حال ہے؟‘‘ خلیفہ منصور کو یہ بہت عجیب لگا میں جس شخص کو چیف جسٹس بنانا چاہتا ہوں ، وہ سب کے سامنے میرے گھوڑوں ، گدھوں کا حال پوچھ رہا ہے، دل میں سوچا کہ میخ اس اہم منصب کے قابل نہیں ، چنانچہ امام شعبی رحمہ اللہ سے کہنے لگا کہ میں آپ کو قاضی القضاۃ نہیں بنا سکتا۔ اس طرح امام معمی رحمہ اللہ بچ گئے۔ اب خلیفہ امام ابوحنیفہ رحمہ اللہ کی طرف متوجہ ہوا اور کہنے لگا: ابوحنیفہ امیں نے آج کے بعد آپ کو چیف جسٹس بنادیا۔‘‘ امام ابوحنیفہ آگے بڑھے اور فرمایا: میں چیف جسٹس بننے کے قابل نہیں ہوں ۔‘‘ خلیفہ منصور نے کہا: نہیں نہیں۔ آپ اس قابل ہیں ۔‘‘ امام ابوحنیفہ نے کہا: ” خلیفہ صاحب اب دو باتیں ہیں ، میں نے جو کچھ کہا یا تو وہ پیچ ہے یا وہ غلط ہے۔ اگر تو وہ غلط ہے تو مجھوٹ بولنے والاشخص چیف جسٹس نہیں بن سکتا ، اور اگر وہ پیچ ہے تو میں کہہ رہا ہوں کہ میں چیف جسٹس بننے کے قابل نہیں ہوں ۔ اب خلیفہ پریشان اور حیران رہ گیا ۔اگر کہتا ، ابوحنیفہ! آپ نے ٹھیک کہا تو بھی ابو تذیفہ چھوٹتے تھے اور اگر کہتا، آپ نے غلط کہا تو بھی ابوحنیفہ پھوٹتے تھے۔
اس طرح امام ابو حنیفہ رحمہ اللہ نے وقت کے خلیفہ کو بھرے دربار میں لا جواب کر دیا ۔

( اسلام کے حیرت انگیز واقعات )

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: