حضور ﷺ کی پیدائش کا واقعہ

حضرت عائشہ رضی اللـــــــہ عنہا سے روایت ہے کہ ایک یہودی عالم مکــــــہ میں رہتا تھا، جب وہ رات آئی جس میں آنحضرت ﷺ پیدا ہوئے تو وہ قریش کی ایک مجلــــــس میں بیٹھا تھا.

اس نے کہا:
“کیا تمہارے ہاں آج کوئی بچــــــہ پیدا ہوا ہے۔”
لوگــــــوں نے کہا:
“ہمیں تو معلــــــوم نہیں ۔”
اس پر اس یہودی نے کہا:
“میں جو کچھ کہتا ہوں ، اسے اچھی طرح ســــن لو، آج اس امت کا آخــــری نبـــی پیدا ہوگیا ہے اور قریش کے لوگو ! وہ تم میں سے ہے، یعنی وہ قریشی ہے۔ ان کے کندھے کے پاس ایک علامت ہے ( یعنی مہر نبوت) اس میں بہت زیادہ بال ہیں ۔یعنی گھنے بال ہیں اور یہ نبوت کا نشـــــان ہے۔ نبوت کی دلیــــــل ہے۔
اس بچے کی ایک علامت یہ ہے کہ وہ دو رات تک دودھ نہیں پیئے گا۔ ان باتـــــوں کا ذکر اس کی نبوت کی علامات کے طــــــور پر پرانی کتب میں موجــــــود ہے۔
علامہ ابن حجــــــر نے لکھا ہےکہ یہ بات درست ہے، آپ نے دو دن تک دودھ نہیں پیا تھا-
یہودی عــــــالم نے جب یہ باتیں بتائیں تو لوگ وہاں سے اٹھ گئے- انہیں یہودی کی باتیں ســــــن کر بہت حیرت ہوئی تھی- جب وہ لوگ اپنے گھــــــروں میں پہنچے تو ان میں سے ہر ایک نے اس کی باتیں اپنے گھــــــر کے افراد کو بتائیں، عــــــورتوں کو چونکہ حضرت آمنـــــہ سلام اللہ علیها کے ہاں بیٹا پیدا ہونے کی خبر ہوچکی تھی، اس لیے انہوں نے اپنے مردوں کو بتایا :
یہودی عــــــالم نے کہا ذرا چل کر مجھے وہ بچہ دکھاؤ-،،
لوگ اسے ساتھ لیے حضرت آمنـــــہ کے گھــــــر کے باہر آئے، ان سے بچــــــہ دکھانے کی درخواست کی- آپ نے بچے کو کپڑے سے نکال کر انہیں دے دیا- لوگوں نے آپ کے کندھے پر سے کپڑا ہٹایا-
یہودی کی نظر جونہی مہر نبوت پر پڑی، وہ فوراً بےہوش ہو کرگر پڑا، اسے ہوش آیا تو لوگوں نے اس سے پوچھا:
تمہیں کیا ہوگیا تھا-،،
جواب میں اس نےکہا:
میں اس غم سے بے ہوش ہوا تھا کہ میری قوم میں سے نبوت ختم ہوگئ..
اور اے قریشیو! اللہ کی قسم! یہ بچہ تم پر زبردست غلبہ حاصل کرے گا اور اس کی شہرت مشرق سے مغرب تک پھیل جائےگی-،،
سبحان اللــــہ و بحمدہ سبحان اللــــہ العظیم
‏ ســـــــلامت رہیں ســـــــلامتی چاہیں ‏

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: