مائیں تو سب کی سانجھی ہوتی ہیں

ﺭﻭﺑﯽ ﺑﯿﭩﺎ ﮐﭽﮭﮍﯼ ﺫﺭﺍ ﻧﺮﻡ ﺭﮐﮭﻨﺎ ﺳﺨﺖ ﮨﻮ ﺗﻮ ﮐﮭﺎﺋﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺎﺗﯽ ” ﻭﮦاﭘﻨﯽ ﺳﺎﺱ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﮐﭽﮭﮍﯼ ﺑﻨﺎ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ ﺟﺐ ﺍﺳﮑﯽ ﺳﺎﺱ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯکﻤﺮﮮ ﺳﮯ ﺁﻭﺍﺯ ﺩﮮ ﮐﺮ ﮐﮩﺎ ۔ ” ﺟﯽ

ﺍﻣﯽ ” ﺍﺱ ﻧﮯ ﻗﺪﺭﮮ ﺍﮐﺘﺎ ﮐﺮکﮩﺎﺗﮭﺎ ۔ﺗﻨﮓ ﺁ ﭼﮑﯽ ﺗﮭﯽ ﻭﮦ ﭘﺮﮨﯿﺰﯼ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﭘﮑﺎ ﭘﮑﺎ ﮐﺮ ۔ﺍﺏ ﺗﻮ ﺍﮐﺜﺮ
ﺍﮐﺘﺎ ﮐﺮ ﺳﻮﭼﺘﯽ ﭘﺘﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺐ ﺟﺎﻥ ﭼﮭﻮﭨﮯ ﮔﯽ ﺳﺎﺱ ﺻﺎﺣﺒﮧ ﺳﮯ ۔
ﺍﺳﮑﯽ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﻮ ﺁﭨﮫ ﺳﺎﻝ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ ﺗﮭﮯ ﺳﺴﺮ ﺗﻮ ﺍﺳﮑﯽ ﺷﺎﺩﯼ ﺳﮯ
ﭘﮩﻠﮯ ﮨﯽ ﻭﻓﺎﺕ ﭘﺎ ﭼﮑﮯ ﺗﮭﮯ ،ﭼﺎﺭ ﻧﻨﺪﯾﮟ ﺗﮭﯿﮟ ﺟﻨﮑﯽ ﺷﺎﺩﯾﺎﮞ ﮨﻮ ﭼﮑﯽ
ﺗﮭﯿﮟ ،ﻋﻤﺮ ﺍﮐﻠﻮﺗﮯ ﺑﯿﭩﮯ ﺗﮭﮯ ﺳﻮ ﺑﯿﻤﺎﺭ ﻣﺎﮞ ﮐﯽ ﻋﯿﺎﺩﺕ ﮐﮯﻟﺌﮯ ﺍﺳﮑﯽ
ﮐﻮﺋﯽ ﻧﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﻨﺪ ﭨﭙﮑﯽ ﺭﮨﺘﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﺏ ﺗﻮ ﻭﮦ ﭼﺎﮨﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺑﯿﻤﺎﺭ
ﺳﺎﺱ ﺳﮯ ﺟﻠﺪ ﻧﺠﺎﺕ ﻣﻞ ﺟﺎﺋﮯ ۔ ” ﺍﻣﯽ ﻣﯿﮟ ﺫﺭﺍ ﺑﺎﺯﺍﺭ ﺟﺎ ﺭﮨﯽ ﮨﻮﮞ
ﺑﭽﻮﮞ ﮐﯽ ﮐﭽﮫ ﭼﯿﺰﯾﮟ ﻟﯿﻨﯽ ﮨﯿﮟ ،ﺍﺑﮭﯽ ﮔﯿﺎﺭﮦ ﺑﺠﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﯿﮟ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﮯ
ﺍﺳﮑﻮﻝ ﺳﮯ ﺁﻧﮯ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺁ ﺟﺎﺅﮞ ﮔﯽ ” ﺭﻭﺑﯽ ﻧﮯ ﮐﮭﭽﮍﯼ ﺳﺎﺱ ﮐﻮ
ﺩﯼ ﺍﻭﺭ ﺟﻠﺪﯼ ﺳﮯ ﺗﯿﺎﺭ ﮨﻮﺋﯽ ،ﺭﮐﺸﮧ ﺍﺳﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺳﮍﮎ ﺳﮯ ﻣﻞ
ﮔﯿﺎ ۔ﺍﺳﮯ ﺑﺲ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﯽ ﮐﭽﮫ ﭼﯿﺰﯾﮟ ﻟﯿﻨﯽ ﺗﮭﯿﮟ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﻭﮦ
ﺑﺎﺭﮦ ﺑﺠﮯ ﺗﮏ ﻓﺎﺭﻍ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ ،ﻭﻗﺖ ﺍﺑﮭﯽ ﺗﮭﺎ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺳﻮﭼﺎ ﺍﻣﯽ ﺳﮯ
ﺑﮭﯽ ﻣﻠﺘﯽ ﭼﻠﻮﮞ ۔ ﺩﺭﻭﺍﺯﮦ ﺧﻼﻑ ﺗﻮﻗﻊ ﮐﮭﻼ ﺗﮭﺎ ﻭﮦ ﺣﯿﺮﺍﻥ ﮨﻮﺋﯽ ۔ﺍﻧﺪﺭ
ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮﺋﯽ ﮨﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺍﻧﺪﺭ ﺑﯿﻨﺎ ﮐﮯ ﮐﻤﺮﮮ ﺳﮯ ﺯﻭﺭ ﺯﻭﺭ ﺳﮯ ﻗﮩﻘﻮﮞ
ﮐﯽ ﺁﻭﺍﺯﯾﮟ ﺁ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯿﮟ ” ﮨﺎﮞ ﺳﺎﺱ ﺻﺎﺣﺒﮧ ﮔﺌﯽ ﮨﻮﺋﯽ ، ﺗﻢ ﺑﯿﭩﮭﻮ، ﺑﺲ
ﺍﺭﻡ ﺩﻋﺎ ﮐﺮ ﻣﺠﮭﮯ ﺳﺎﺱ ﺳﮯ ﺟﻠﺪ ﻧﺠﺎﺕ ﻣﻞ ﺟﺎﺋﮯ ،ﺗﻨﮓ ﺁ ﮔﺌﯽ ﮨﻮﮞ ﯾﺎﺭ
،ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﯽ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺧﺪﻣﺘﯿﮟ ” ﺭﻭﺑﯽ ﮐﮯ ﭼﻠﺘﮯ ﻗﺪﻡ ﻭﮨﯿﮟ ﺭﮎ
ﮔﺌﮯ ،ﯾﮧ ﮐﯿﺴﺎ ﺟﻤﻠﮧ ﺗﮭﺎ ،۔۔ ﺍﯾﮏ ﻟﻤﺤﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺗﻮ ﺍﺳﮯ ﮐﭽﮫ ﺳﻤﺠﮫ
ﻧﮧ ﺁﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﻭﮦ ﺗﯿﺰﯼ ﺳﮯ ﻣﮍﯼ ﺍﻭﺭ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﻧﮑﻞ ﮔﺌﯽ ﻭﮦ
ﯾﻘﯿﻨﻦ ﺍﺳﮑﯽ ﺑﮭﺎﺑﯽ ﮐﯽ ﺩﻭﺳﺖ ﺍﺭﻡ ﺗﮭﯽ ﺟﺲ ﺳﮯ ﺍﺳﮑﯽ ﺑﮭﺎﺑﯽ ﺑﺎﺕ
ﮐﺮ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﺳﮑﮯ ﭼﮭﻮﭨﮯ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﮐﯽ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﻮ ﺍﺑﮭﯽ ﺳﺎﻝ ﺑﮭﯽ
ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﯿﻨﺎ ﮐﮯ ﻣﻨﮧ ﺳﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺎﮞ ﮐﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ ﺍﯾﺴﯽ ﺑﺎﺕ
ﺳﻦ ﮐﺮ ﻭﮦ ﺍﻧﺪﺭ ﺗﮏ ﮐﺎﻧﭗ ﮔﺌﯽ۔ﺗﺐ ﺍﺳﮑﮯﻣﻨﮧ ﺳﮯ ﺑﮯ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﻧﮑﻼ ﺗﮭﺎ
ﺍﻟﻠﻪ ﻣﯿﺮﯼ ﻣﺎﮞ ﮐﻮ ﺳﻼﻣﺖ ﺭﮐﮭﻨﺎ ۔ﻭﮦ ﺭﮐﺸﮧ ﻣﯿﮟ ﺳﺎﺭﮮ ﺭﺍﺳﺘﮯ ﺑﮯ
ﺁﻭﺍﺯ ﺭﻭﺗﯽ ﺁﺉ ﺗﮭﯽ ۔ ” ﺍﻣﯽ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﮐﮭﺎ ﻟﯿﺎ ﺁﭖ ﻧﮯ ،ﮐﺴﯽ ﺍﻭﺭ ﭼﯿﺰ ﮐﯽ
ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮨﻮ ﺗﻮ ﻣﺠﮭﮯ ﺁﻭﺍﺯ ﺩﮮ ﺩﯾﺠﯿﮱ ﮔﺎ ” ﮔﮭﺮ ﺁ ﮐﺮ ﻭﮦ ﺳﯿﺪﮬﺎ ﺍﭘﻨﯽ
ﺳﺎﺱ ﮐﮯ ﮐﻤﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﺏ ﺍﭘﻨﯽ ﺳﺎﺱ ﺳﮯ ﺑﺎﺕ ﮐﺮﺗﮯ
ﮨﻮﮮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻟﮩﺠﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﮐﺘﺎﮨﭧ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﺑﮯ ﺣﺪ ﺍﺣﺘﺮﺍﻡ ﺗﮭﺎ.
اس لئیے بہنیں بیٹیاں صبر شکر کریں برداشت کریں جس طرح آپکی جنت آپکی ماں کی پیروں تلے ایسے ہی آپ کہ شوہر کی جنت اس کی ماں کہ پیروں تلے۔۔۔اگر ہو سکے تو شوہر بیوی کی ماں کو اپنی ماں جیسا سمجھے اور بیوی شوہر کی ماں کو اپنی ماں جیسا۔۔۔

کیونکہ مائیں سب کی سانجھی ہوتیں ہیں۔۔۔

اور جو لوگ یہ سمجھنے میں کامیاب ہو جاتے انکے گھروں میں کافی سکون ہو جاتا۔۔۔۔
اللہ پاک ہر میاں بیوی کو خوش و خرم رکھے آمین۔۔۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.

%d bloggers like this: