دل کی دھڑکنیں بے ترتیب کیوں ہو جاتی ہیں

بیٹا کیا ہوا ! رات کے اس پہر باہر اکیلی کیوں بیٹھی ہو ؟ کچھ نہیں اماں بس دل بوجھل سا ہے نیند نہیں آ رہی ۔ کیا ہوا میری شہزادی کو ۔۔۔ اماں ایک بات پوچھوں! جی پتر ۔ اماں کبھی کبھی دل کی دھڑکنیں بے ترتیب کیوں ہو جاتی ہیں ایسا کیوں لگتا ہے جیسے دل میں دھڑکنیں بکھری پڑی ہوں ۔

پتر یہ جو دل ہے نا یہ رب سوہنے کا حجرہ ہے جب اس دل میں اسکے مالک کے بجائے کوئ کرائے دار آ کے رہنے لگ جائے تو وہ اسکا خیال نہیں رکھتا اس حجرے میں پڑی چیزوں کو ترتیب سے نہیں رکھتا اسکی مرمت نہیں کرتا کیونکہ اسے معلوم ہوتا ہے میں اس میں چند دن کا مہمان ہوں جیسے ہی مجھے اس سے بہتر جگہ ملے گی میں وہاں منتقل ہو جاوں گا لیکن پتر جو مالک ہوتا ہے نا وہ مکان کبھی نہیں چھوڑتا چاہے۔

جتنا بوسیدہ جتنا ٹوٹا پھوٹا کیوں نا ہو وہ اس میں رکھی تمام چیزوں کو نہایت سلیقے کے ساتھ رکھتا ہے اسکی ٹوٹ پھوٹ کی مرمت کرتا ہے ۔۔۔اور پتر یہ بس اسی سوہنے رب کی شان ہے جو ٹوٹے دلوں میں رہتا بھی ہے اور اسے جوڑتا بھی ہے ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.

%d bloggers like this: