قصیدہ امام شافعی رحمۃ اللٰہ کا ترجمہ

رزق کے لئے مال کا ہونا شرط نہیں۔ یہ بھی تو ہو سکتا ہے کسی کو رزق کی صورت اچھا اخلاق یا پھر حسن و جمال دے دیا گیا ہو۔

یہ بھی تو ہو سکتا ہے کسی کو رزق کی صورت میں عقل دے دی گئی ہو اور عقل اس کو نرم مزاج بنا دے اور زیادہ نرم مزاج اور متحمل بن جاۓ۔

یہ بھی تو ہو سکتا ہے کہ کسی کو رزق کی صورت میں اعلٰی مزاج کا شوہر یا بیوی مل جاے ۔یا کریم دوست یا رشتہ دار یا اولاد مل جاۓ۔

یہ بھی تو ہو سکتا ہے کہ کسی کو رزق کی صورت علم نافع دے دیا گیا ہو اور یہ بھی ہو سکتا ہے کہ اُسے رزق کی صورت لمبی عمر دے دی گئی ہو۔

یہ بھی تو ہو سکتا ہے کسی کو رزق کی صورت ایسا پاکیزہ دل دے دیا گیا ہو جس سے وہ لوگوں میں محبت اور خوشیاں بانٹتا پھر رہا ہو۔

یہ بھی تو ہو سکتا ہے کسی کو رزق کی صورت ذہنی سکون دے دیا گیا ۔وہ شخص بھی تو خوش نصیب ہی ہے جس کو ذہنی سکون عطا کیا گیا ہو۔

یہ بھی تو ہو سکتا ہے کسی کو رزق کی صورت۔۔نیک طبع عطاکی گئی ہو ۔وہ شخص اپنی نیک طبیعت کی وجہ سے اپنے ارد گرد خیر بانٹتا پھرے۔

یہ بھی تو ہو سکتا ہے کسی کو رزق کی صورت تقوٰی کا لباس پہنا دیا گیا ہو اور اس شخص کو اس لباس نے عزت اور مرتبہ والی حیثیت بخش دی ہو۔

یہ بھی تو ہو سکتا ہے کسی کو رزق کی صورت ایسا محفوظ ( عزت اور شرف والا) مقام مل جاۓ جو اس کے لئے حلال کمائی اور امن والی جاۓ پناہ بن جاۓ۔

(پس ) رزق کے لئے مال کا ہونا شرط نہیں ۔پس اپنے دیے گئے یعنی عطا پر مطمئن رہو اور اللٰہ تعالٰی کا شکر ادا کرتے رہو۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.

%d bloggers like this: