حضرت عثمان بن عفان ؓ اور حضرت رقیہ بنت رسول ﷺ

حضرت عثمان بن عفان ؓ اور حضرت رقیہ بنت رسول اللہ ﷺ کی جوڑی عربوں میں بہت مشہور تھی دونوں کے حسن و جمال کا کوئی ثانی نہیں تھا.

دونوں ہی کا لقب “ذو الھجرتین” تھا کیونکہ کفار مکہ نے جب مسلمانوں پر ظلم وستم اور تشدد کے پہاڑ توڑے تو یہ دونوں ہی تھے کہ دو بار ان کو ہجرت کی اجازت دی گئی تھی۔ دونوں کی ایک دوسرے کے ساتھ محبت عدیم النظیر تھی دونوں کی وفا مثالوں میں دی جاتی تھی جب رقیہؓ کی وفات ہوئی تو پورا شہر غمزدہ اور ہر آنکھ نم دیدہ تھی مرد وخواتین میاں بیوی کی جدائی پر رو رہے تھے حضرت عمر فاروق ؓ خواتین پر غصہ ہوۓ تو رسول اللہ ﷺ نے منع فرمایا کہ ان کو رونے دیں۔ اس جوڑی کی شہرت اور مقبولیت کی یہی وجہ نہیں تھی کہ خواتین میں رقیہ ؓ جیسی خوبصورت اور مردوں میں عثمان ؓ جیسا خوبرو کوئی نہ تھا بلکہ ان کی شہرت کی وجہ لا زوال محبت تھی جو اسلام سے پہلے شروع ہوا تھا عثمان ؓ کو رقیہ ؓ دور جاہلیت میں بہت پسند تھیں اور وہ ان سے شادی کرنا چاہتے تھے لیکن قبائلی اور خاندانی رسم ورواج کی وجہ سے رقیہ ؓ کی شادی خاندان میں ابو لہب کے بیٹے عتبہ سے ہوئی عثمان بہت پریشان تھے وقت گزرتا گیا رسول اللہ ﷺ نے نبوت کا اعلان کیا عثمان ؓ ابو بکر ؓ کی معیت میں مسلمان ہوۓ ایسے مسلمان کہ دنیا میں جنت کی بشارت مل گئی.

دوسری طرف ابو لہب اور اس کی بیوی ام جمیل کی رسول اللہ ﷺ سے نفرت اور دشمنی بڑھتی گئی یہاں تک کہ (سورہ ابو لہب) نازل ہوئی دونوں میاں بیوی نے اپنے بیٹوں عتبہ اور عتیبہ کو حکم دیا کہ رقیہ ؓ اور ام کلثوم ؓ کو طلاق دیں۔ حضرت رقیہ ؓ اور حضرت ام کلثوم ؓ کو طلاق ہوئی دونوں بہنیں باپ کے گھر آگئیں یہ ایک باپ ہی محسوس کرسکتا ہے کہ ایک ساتھ دو بیٹیوں کو طلاق ہو جائے تو اس باپ کے دل پر کیا گزرے گی حضرت عثمان ؓ کو جب پتہ چلا تو یہ خبر اگرچہ غم کی تھی لیکن وہ خوش ہوۓ کیونکہ ان کے دل میں اب بھی حضرت رقیہ ؓ کے لیے محبت تھی انہیں امید تھی کہ رقیہ ؓ کے ساتھ شادی کا خواب پورا ہوجائے گا رسول اللہ ﷺ سے حضرت رقیہ ؓ کا ہاتھ مانگا اس سے بہترین داماد اور کون ہوسکتا تھا جس کو اللہ نے دین اور دنیا دونوں سے نوازا تھا رسول اللہ ﷺ نے ہاں کردی اور یوں دونوں کی شادی ہوئی بتایا جاتا ہے کہ مکہ والوں نے حضرت رقیہ ؓ جیسی خوبصورت دلہن اور عثمان ؓ جیسا دولہا نہیں دیکھا تھا۔ ایسی بے مثال جوڑی تھی کہ ہر ایک کو دونوں پر رشک آتا تھا .

خود رسول اللہ ﷺ کو بھی بہت ناز تھا حضرت اسامہ بن زید ؓ کو کچھ گوشت دے کر بیٹی کے گھر بھیجا واپس آئے تو پوچھا آپ نے ان کو دیکھا اسامہ ؓ نے کہا ہاں جی۔ رسول اللہ ﷺ نے مسکراتے ہوۓ پھر پوچھا کہ ان جیسی جوڑی کبھی دیکھی ہے؟؟ تو اسامہ ؓ نے کہا بالکل نہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.

%d bloggers like this: