نومسلم عورت کے الفاظ

ایک باپردہ عورت نے فرانس کی ایک سپر مارکیٹ سے خریداری کی اور اس کے بعد وہ عورت پیسوں کی ادائیگی کیلئے لائن میں کھڑی ہو گئی.اپنی باری آنے پر وہ چیک آؤٹ کاؤنٹر آئی جہاں اسے رقم ادا کرنا تھی.

وہاں اس نے اپنا سامان ایک ایک کرکے کاؤنٹر پر رکھ دیا.. چیک آؤٹ پر کھڑی ایک بےپردہ مسلم عرب لڑکی نے اس خاتون کی چیزیں ایک ایک کرکے اٹھائیں اور ان کی قیمتوں کا جائزہ لینے لگی.تھوڑی دیر بعد اس نے نقاب والی خاتون گاہک کی طرف ناراضگی سے دیکھا اور کہنے لگی..
“ہمیں اس ملک میں کئی مسائل کا سامنا ہے.. ان مسائل میں ایک مسئلہ تمہارا نقاب ہے.. ہم یہاں تجارت کرنے کے لئے آئے ہیں نہ کہ اپنا دین اور تاریخ دکھانے کے لئے.. “وہ مسلم عرب عورت جو نام نہاد روشن خیال تھی ‘ اپنی بے ہودہ تقریر جھاڑے جا رہی تھی.. ” اگر تم اپنے دین پر عمل کرنا چاہتی ہو اور نقاب پہننا ضروری سمجھتی ہو تو اپنے ملک واپس چلی جاؤ جہاں جو تمہارا دل چاہے کر سکتی ہو.. وہاں نقاب پہنو ‘ ٹوپی والا برقع پہنو ‘ جو چاہے کرو مگر یہاں رہ کر ہم لوگوں کے لئے مسائل مت پیدا کرو.. “نقاب پہننے والی خاتون ایک مسلم عورت کے منہ سے نکلنے والے الفاظ پر دم بخود ہو کر رہ گئی,اپنے سامان کو بیگ میں رکھتے ہوئے اس کے ہاتھ رک گئے اور اچانک اس نے اپنے چہرے سے نقاب الٹ دیا..کاؤنٹر پر کھڑی لڑکی اس کا چہرہ دیکھ کر حیران رہ گئی کیونکہ نقاب والی لڑکی کے بال سنہری اور آنکھیں نیلی تھیں..اس نے کاؤنٹر والی سے کہا..”میں فرانسیسی لڑکی ہوں نہ کہ عرب مہاجر.. یہ میرا ملک ہے میں مسلمان ہوں اسلام میرا دین ہے..یہ نسلی دین نہیں ہے کہ تم اس کی مالک ہو.. یہ میرا دین ہے اور میرا اسلام مجھے یہی سبق دیتا ہے جو میں کر رہی ہوں.. میرا دین مجھے پردے کا حکم کا دیتا ہے..تم نسلی مسلمان ہو کر ہمارے یہاں کے غیر مسلموں سے مرعوب ہو ‘ دنیا کی خاطر خوف میں مبتلا ہو ‘ مجھے کسی کا خوف نہیں ہے.. مجھے صرف اپنے اللہ کا خوف ہے اور اپنے پیارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے حکم سے محبت ہے اور حکم کو پورا کرنے میں مجھے کسی کی پرواہ نہیں ہے.. “اس فرانسیسی نو مسلم عورت کے یہ لفظ تو بےپردہ مسلم عورتوں کے منہ پر طمانچہ تھے کہ ” تم پیدائشی مسلمانوں نے دنیا کے بدلے اپنا دین بیچ دیا ہے اور ہم نے تم سے خرید لیا ہے..

Leave a Reply

Your email address will not be published.

%d bloggers like this: