رسول ﷺ کی پیاری ادائیں

سَردارِ اَنبیا، حبیبِ کِبرِیا صلی اللہ تعالی علیہ والہ وسلم کی ذاتِ والا تَبار کی ہر ہر ادا باکمال ہے۔آپ صلی اللہ تعالی علیہ والہ وسلم کی پیاری پیاری اداؤں میں سے 8 پیاری پیاری ادائیں یہ ہیں:
.
لَبَّیْک کہتے:
آپ صلی اللہ تعالی علیہ والہ وسلم کو جو بھی پکارتا، اُسے لَبَّیْک کہہ کر جواب عنایت فرماتے تھے۔
(الشفاءج1،ص 121)
بات پوری سنتے:
اگر کوئی شخص آپ صلی اللہ تعالی علیہ والہ وسلم کے کان میں سرگوشی کرتا تو جب تک اُس کی بات مکمل نہ ہو جاتی اپنا سَر مُبارک اُس کے منہ سے دور نہ فرماتے۔ (ایضاً)
پاؤں نہ پھیلاتے:
صحابۂ کرام علیہمُ الرِّضوان مجلس میں حاضر ہوتے تو آپ صلی اللہ تعالی علیہ والہ وسلم کبھی پاؤں پھیلاکر نہیں بیٹھتے تھے۔(ایضاً)
چادر بچھاتے:
مُلاقات کے لئے اگر کوئی حاضر ہوتا توبعض اوقات اُس کےلئے اپنی چادر بچھاتے بلکہ اپنی مَسْنَد بھی پیش کردیا کرتے تھے۔
(ایضاً،ج1،ص122)
کنیت سے پکارنا:
صحابَۂ کرام علیہم الرضوان کو اُن کی کنیت اور اُن کے پسندیدہ ناموں سے پکارتے تھے۔ (ایضاً)
با وقار گفتگو:
آپ صلی اللہ تعالی علیہ والہ وسلم نہایت وقار کے ساتھ اِس طرح ٹھہر ٹھہر کر گفتگو فرماتے کہ اگر کوئی آپ کے جملوں کو گننا چاہتا تو گن سکتا تھا۔
(ایضاً،ج1،ص139)
چلنے کا پُروقار انداز:
آپ صلی اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلم رفتار کے ساتھ اور ذرا جُھک کر(یوں) چلا کرتے تھے گویا کسی بلندی سے اُتر رہے ہیں۔
(شمائل ترمذی،ص 87)
حضرتِ سیّدُنا ابوہُریرہ رضی ﷲ تعالیٰ عنہ فرماتے ہیں: آپ صلی اللہ تعالی علیہ والہ وسلم اِس قدر تیز چلتے تھے گویا زمین آپ کے قدموں کے نیچے سے لپیٹی جا رہی ہو۔ ہم آ پ کے ساتھ چلنے میں ہانپنے لگتے تھے مگر آپ صلی اللہ تعالی علیہ والہ وسلم بغیر کسی مشقت کے تیز رفتاری کے ساتھ چلتے رہتے۔
(شمائل ترمذی،ص86)
خوشبو کا تحفہ:
آپ صلی اللہ تعالی علیہ والہ وسلم خوشبو کا تحفہ کبھی واپس نہیں کرتے تھے، بلکہ فرماتے: خوشبو کا تحفہ رَد مت کرو! کیونکہ یہ جنّت سے نکلی ہے۔
(ایضاً،ص 130)
اللہ عَزَّوَجَلَّ ہمیں بھی رسولِ کریم صلَّی اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم کی مبارک اداؤں پر عمل کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔اٰمِیْن بِجَاہِ النَّبِیِّ الْاَمِیْن صلَّی اللہ تعالٰی علیہ واٰلہٖ وسلَّم

Leave a Reply

Your email address will not be published.

%d bloggers like this: