حضرت آدم علیہ السلام اور اماں حوا کی ملاقات

.. امام سدی رحمتہ اللہ علیہ نے حضرت عبد اللہ بن عباس، حضرت عبداللہ بن مسعوڈ، اور دیگر صحابہ رضی اللہ ہم سے روایت کی ہے کہ انہوں نے فرمایا:


ابلیس کو جنت سے نکال دیا گیا اور آدم علیہ السلام کو وہاں آباد کر دیا گیا۔ آپ جنت میں اکیلے گھومتے پھرتے تھے۔ ان کا کوئی ساتھی نہ تھا,جس سے انہیں تسکین حاصل ہوتی ۔ ایک بار وہ سوئے، جب جاگے تو دیکھا کہ ان کے سر کے پاس ایک خاتون بیٹھی ہیں ۔ انہیں اللہ نے آپ کی پسلی سے پیدا فرمایا تھا۔ آپ نے فرمایا : تو کون ہے؟ انہوں نے کہا : عورت فرشتوں نے جو آدم علیہ السلام کے علم کی وسعت معلوم کرنا چاہتے تھے،کہا : اے اے آدم الطليعة ! اس کا نام کیا ہے؟ انہوں نے فرمایا : ”حواء “ انہوں نے کہا : اس کا نام حواء کیوں ہے؟ , فرمایا : کیونکہ وہ ایک زندہ وجود سے پیدا کی گئی ہے۔آپ نے فرمایا : مجھے کس لئے پیدا کیا گیا ہے؟ انہوں نے کہا : تا کہ آپ مجھ سے تسکین حاصل کریں.

Leave a Reply

Your email address will not be published.

%d bloggers like this: