رسول ﷺ کی والدہ علی رضہ کے لئے دعائے مغفرت

جب سیدہ فاطمہ بنت اسد بن ہاشم رضی اللہ عنہا والدہ ماجدہ حضرت علی رضی اللہ عنہ وفات پا گئیں تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ان کے پاس تشریف لائے.

پھر آپ ان کے سر کی طرف تشریف فرما ہوئے اور فرمایا: اے میری ماں ! اللہ تجھ پر رحم کرے، میری (حقیقی) ماں کے بعد تو میری ماں تھی، تو خود بھوکی رہتی اور مجھے خوب کھلاتی، تو کپڑے (چادر) کے بغیر سوتی اور مجھے کپڑا پہناتی، تو خود بہترین کھانا نہ کھاتی اور مجھے کھلاتی تھی، تمھارا مقصد اس (عمل) سے اللہ کی رضامندی اور آخرت کاگھر تھا۔پھر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے حضرت اسامہ بن زید،حضرت ابو ایوب الانصاری، حضرت عمر بن الخطاب رضوان الله اجمعین اور ایک کالے غلام کو بلایا تاکہ قبر تیار کریں پھر انھوں نے قبر کھودی، جب لحد تک پہنچے تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے اسے اپنے ہاتھ سے کھودا اور اپنے ہاتھ سے مٹی باہر نکالی پھر جب فارغ ہوئے تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اس قبر میں داخل ہوکر لیٹ گئے اور فرمایا: اللہ ہی زندہ کرتا اور مارتا ہے اور وہ زندہ جاوید ہے کبھی نہیں مرے گا۔(اے اللہ!) میری ماں فاطمہ بنت اسد کو بخش دے اور اس کی دلیل انھیں سمجھا دے، اپنے نبی اور مجھ سے پہلے نبیوں کے (وسیلے) سے ان کی قبر کو وسیع کردے، بے شک تو ارحم الراحمین ہے۔(المعجم الاوسط للطبرانی ۱۵۲/۱۔ ۱۵۳ ۱۹۱)ی

Leave a Reply

Your email address will not be published.

%d bloggers like this: