شربت دیدار سے روزہ کا افطار

مواہب لدنیہ میں واقعہ لکھا ہوا ہے کہ عبداللہ بن مخزومہ ﷺ ایک بزرگ تھے انہوں نے دعا مانگی تھی کہ اے اللہ جنگ یمامہ کے لئے جار ہا ہوں .

اب اس جنگ میں میرے جسم کے ہر عضو کے او پر زخم آئے یہ دعا مانگی اور واقعی ایسا ہی ہوا کہ وہ گھمسان کے دن میں اس طرح گھر گئے کہ ان کے جسم کے ہر ہر عضو پر زخم آئے جب زخمی حالت میں تھے اور روح پرواز کرنے کے قریب تھی ایک مسلمان قریب ہوا تو اس مسلمان نے کہا کہ آپ کو پانی پلاؤں آپ کے جسم کا ہر ہر عضو زخمی ہو چکا ہے تو عبداللہ بن مخزومہ یہ فرمانے لگے کہ نہیں میں اس وقت روزے کی حالت میں ہوں میں شربت دیدار سے اپنے روزے کا افطار کرنا چاہتا ہوں ایسی بھی محبت ہوتی ہے اللہ اکبر ۔اللہ تعالی اس محبت کا تھوڑ اسا نشہ ہمیں بھی عطا فرمادے پھر ہمیں عبادات کے اندرسکون نصیب ہو جاۓ گا۔ اس لیے کہا کہ (العشق نار بحرق ماسوی اللہ عشق ایک آگ ہے.جو ماسوا اللہ کو ہلا کر رکھ دیتی ہے اللہ کی محبت دل میں آتی ہے غیر سے انسان کی نگاہیں اٹھ جاتی ہیں۔(تمناے دل۵۵)

Leave a Reply

Your email address will not be published.

%d bloggers like this: