دعوت رسول ﷺ

ہمارے نبی کے ایک بہت پیارے صحابی حضرت جابر رضی اللہ عنہ ایک بار پیارے نبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی دعوت کرنا چاہتے تھے ، گھر آکر بیوی سے پوچھا : دعوت کےلئے کچھ ہے؟ بیوی نے کہا : بکری ہے ،

آپ نے بکری ذبح کی اور اس کا سالن پکوالیا اورکھانا لے کر ہمارے پیارے نبی کے پاس چلے گئے۔ ہمارے پیارے نبی اپنے صحابیوں کا بہت خیال رکھتے تھے۔ جب کھانا آیاتوحضرت جابر سے فرمایا : جاؤ صحابہ کو بلاکر لاؤ ، کچھ دیربعد صحابہ آگئے۔ ہمارے پیارے نبی نے حضرت جابر سے فرمایا : اب میرے پاس تھوڑے تھوڑے کرکے بھیجتے جاؤ۔ جب صحابہ کھانے کے لئے آگئے تو ہمارے پیارے نبی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا : ہڈی مت توڑنا۔ صحابۂ کرام آتے اور کھانا کھاکر چلے جاتے۔ جب سب نے کھالیا تو اب ہڈیوں کو ایک برتن میں جمع کیا۔ پھر آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے ہڈیوں پر اپنا پیارا پیارا ہاتھ رکھ کر کچھ پڑھا۔ حضرت جابر وہیں کھڑے تھے وہ کہتے ہیں میں سن نہیں سکا کہ آپ نے کیا پڑھا۔ ایک دم سے وہ ہڈیاں زندہ بکری بن گئی ۔ اوروہ بکری گردن ہلاکر اپنے کان جھاڑنے لگی۔ ہمارے پیارے نبی صلی اللہ علیہ والہ وسلم نے حضرت جابر سے فرمایا : اپنی بکری لے جاؤ۔ حضرت جابر بکری گھر لے آئے ، ان کی بیوی نے بکری کو دیکھا تو وہ حیران ہوگئیں ، کہنے لگیں ، یہ کہاں سے حضرت جابر نے کہا : یہ وہی بکری ہے جو ہم نے ذبح کی تھی ، ہمارے پیارے نبی نے دعا کی اوراللہ پاک نے اسے ہمارے لئے زندہ کردیا۔ (خصائص الكبرى ، 2 / 112)

Leave a Reply

Your email address will not be published.

%d bloggers like this: